بدکار کون؟

سیاہی آخرِ شب
سید مزمل احمد سیاہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بدکار کون؟

کسی نے سوال کیا کہ حضور بدکار کون ہے؟تو جواب یہ ہے کہ کسی کی ذات میں خامی، کمی، اُس کی کوتاہیاں ڈھونڈ نکالنا بڑا آسان ہوتا ہے۔ ہم اکثر زندگی میں اپنا زیادہ وقت اِس میں صَرف کر دیتے ہیں۔ آپ نے دیکھا ہو گا کہ لوگ خاص کر ہم خود کسی کے بارے میں بھی ’اندر کا راز‘ خوب جانتے ہیں۔ حالانکہ ہم جو دوسرے کے آمنے سامنے رہ کر بھی ایک دوسرے کی کہی ہوئی باتوں کا مضمون اور مفہوم نہیں جان سکتے وہ دل میں چھُپی نیّت کی جانکاری کے دعوے دار بن جاتے ہیں۔ ہم اِتنے پاک صاف ہو گئے ہیں کہ ہمیں اگلا پلید دکھتا ہے۔ اچھائی یہ ہے کہ پہلے خود کی تصیح کی جائے؛ خامی یہ ہے کہ پہلے دوسرے کی تصیح کی جائے۔ اِس وقت ایک بزرگ کا واقعہ یاد آ رہا ہے جو بارش میں مریدوں کے ساتھ کہیں جا رہے تھے۔ رستے میں کہیں بارش کا پانی کھڑا تھا اور کافی کیچڑ تھی۔ برابر میں ایک مکان کی دیوار کے پاس کچھ بالائی صاف رستہ تھا۔ وہ آگے آگے مُریدوں کے ساتھ چلنے لگے تاکہ کپڑے کیچڑ سے بچ سکیں۔ اللہ کی کرنی ایسی ہوئی کہ کیا دیکھتے ہیں کہ سامنے سے ایک مریل سا خارش زدہ کالا کُتا بارش میں بھیگا چلا آ رہا ہے۔ کچھ دیر بزرگ اور کُتے نے آنکھوں آنکھوں میں ایک دوسرے کو دیکھا اور پھر بزرگ نے خوفزدہ چیخ کے ساتھ رستہ چھوڑ کے کیچڑ میں چھلانگ لگا دی اور کُتے کے لئے رستہ چھوڑ دیا۔ کُتے کے صاف رستے سے گُزر جانے کے بعد مُریدوں نے اپنے کپڑے کیچڑ سے بچائے اور صاف رستے سے ہوتے ہوئے پار بزرگ تک پہنچے۔ اب اُن میں سے ہر ایک شکوہ کنعاں تھا کہ کُتے کو رستہ دے کر آپ نے اپنے کپڑے گندے اور ناپاک کئے حالانکہ کُتا آپ سے بہتر ہر گز نہیں تھا۔ بزرگ نے فرمایا کہ بچو! یہی خیال میرے ذہن میں ایک لمحے کو آیا تھا کہ رستہ پار کرنا میرا حق ہے کہ میں کُتے سے بہتر ہوں اور اِسی خیال کے آتے ہی میں نے اپنا تکبر چھوڑا، اللہ سے توبہ کی اور سزا کے طور پر کیچڑ میں چھلانگ لگا دی کہ ہمیں کیا حق ہے کہ کسی کو بُرا کہیں، دل کا حال تو اللہ جانتا ہے۔

کسی کے دل کے حالات کا دعویٰ نہ کریں کہ جو جانتے ہیں، خاموش رہتے ہیں اور کسی مخلوق کو کمتر نہیں سمجھتے۔ جو نہیں جانتے وہ اپنی بڑائی کا دعویٰ کر بیٹھتے ہیں اور خود کو برتر سمجھنے اور سمجھانے میں لگ جاتے ہیں۔حضرت واصف علی واصف ؒ نے فرمایا تھا کہ ”کمتر بات یہ ہے کہ کوئی تمہارے منہ پر تمہاری تعریف کرے اور بڑی بدبختی ہے کہ تم اپنی تعریف اپنے منہ سے کرو!“۔ تو بدکار وہ ہے جو دوسرے کو بدکار سمجھے!!

رُوپ سَلونا، چال اَلبیلی، دِل وِچ جیسے سونا
ہر کوئی اُس سے دُنیا مانگے، وہ مانگے بس کونا
چھَم چھَم کرتے گھُنگرو باندھے، رات لُٹے، وہ لُوٹے
اور کوٹھے پہ جم کے ناچے، رُوپ چھُپائے سوہنا
چھُپ چھُپ کر وہ رونے والی، اللہ والی نہ ہو
پَل پَل جس کے آگے عاجِز، اُس کا بس اِک رونا
پول کھُلے تو مر مر جاوے، چھُپا رہے تو جیوے
کیسے کیسے بھید وہ جانے پھر بھی وہ چُپ ہونا
روز سیاہ وہ ملنے آئے، روز کہے، رُک جائے
روز وہ ناپے کاسہ میرا، مجھے کہے کھِلونا

اللہ آپ کو آسانیاں عطا فرمائے اور آسانیاں تقسیم کرنے کا شرف عطا فرمائے! آمین!
X————————-X

Image

نفس اور ضمیر

سیاہی آخرِ شب
سید مزمل احمد سیاہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نفس اور ضمیر

نفس کیا ہے، ضمیر کیا ہے؟ کیا یہ ایک ہی حیثیت کے دو نام ہیں؟ کیا یہ ایک ہی ہیں؟یا اِن میں کوئی فرق ہے۔ نفس اور ضمیر دو بہت الگ الگ حقیقتیں ہیں۔ نفس جسم کی حرکت جبکہ ضمیر روح کی جُنبش ہے۔ نفس دِل کی خواہشات مگر ضمیر قَلب کی سرگوشیاں ہیں۔ نفس جسم کے بعد نہیں ہو گا اور ضمیر ہمیشہ تھا اور ہمیشہ رہے گا۔نفس جسم کی آواز اور ضمیر روح کی صدا ہے۔ نفس شیطانی ہدایات ہیں جبکہ ضمیر الہامی اِشارے۔ نفس پر عمل آنسُوﺅں کو روک دیتا ہے، ضمیر پر عمل آنسُوﺅں کو جاری کر دیتا ہے۔ جب شیطان جیت جاتا ہے، نفس جیت جاتا ہے تو آپ خوشیاں مناتے ہیں، جب ضمیر جیت جاتا ہے تو اللہ کے آگے رونا بند ہی نہیں ہوتا۔نفس کا غلام لوگوں کے آگے روتا ہے اور ضمیر کا غلام اللہ کے آگے روتا ہے۔ نفس کے غلام کی تنہائی ناپاکی اور ضمیر کے غلام کی تنہائی پاکی کے سِوا کچھ نہیں۔ نفس اور ضمیر دونوں ہی کی سرگوشیاں آپ میں جاری ہیں!

اللہ نے حضرت آدمؑ میں روح ڈال دی، ضمیر دے دیا، شیطان نفس کا شکار ہو گیا بحث میں مارا گیا۔ فرق ہی صرف اِتنا سا ہے کہ نفس اللہ سے بحث کرواتا ہے اور ضمیر توبہ کی طرف لے جاتا ہے۔ نفس اللہ کو مانتا ہے، اللہ کی نہیں مانتا۔ ضمیر اللہ کی مانتا ہے اور ضمیر اللہ ہی کی آواز ہے، یہ gut feeling ہے آپ کی۔ نفس کی رہنمائی بربادی اور ضمیر کی رہنمائی خوشحالی لاتی ہے۔ جو نفس کا گرویدہ ہے اُس کی خوشحالی دھوکا ہے اور ضمیر کی رہنمائی میں چلنے والے کی خوشحالی وہ خوشحالی ہے جو اللہ کے نزدیک خوشحالی ہے! نفس کی ماننے والا اللہ کی نہیں سُنتا اور ضمیر کا ماننے والا اپنی نہیں کرتا۔ جو اللہ کا غُلام ہو گیا وہ اپنی نہیں کرتا۔ جو مالک نے بول دیا، وہی آگے بول دیا، جومالک نے دِکھا دیا وہی دیکھا، جو مالک نے دے دیا وہی رکھ لیا۔تو ایسے غلاموں نے ہی گویا دِل میں اللہ کا نور چھُپائے رکھا ہے۔

اُس کو ہر دم منائے رکھا ہے
نفس اپنا گِرائے رکھا ہے
سب کو شِکوہ ہے خُشک آنکھوں کا
ہم نے اللہ چھُپائے رکھا ہے

اللہ آپ کو آسانیاں عطا فرمائے اور آسانیاں تقسیم کرنے کا شرف عطا فرمائے! آمین!
X————————-X

Image

Categories: Sufism

اللہ بادشاہ اور اُس کے سپاہی!!

سیاہی آخرِ شب
سید مزمل احمد سیاہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اللہ بادشاہ اور اُس کے سپاہی!!

                کسی بادشاہ کا وزیر بہت فرماںبردار اور عقلمند تھا۔ اچھی خاصی شاہی نوکری کرتے کرتے اچانک نوکری چھوڑ کر اللہ تعالیٰ کی عبادت میں مشغول ہو گیا۔ ایک دن بادشاہ اُس کے پاس گیا اور پوچھنے لگا کہ تم نے نوکری کیوں چھوڑ دی؟                                                                
 وزیر نے کہا کہ ”پانچ باتوں کی وجہ سے میں نے شاہی نوکری چھوڑ دی“۔                                                                                                                                                
بادشاہ نے پوچھا کہ ”وہ پانچ اسباب کون سے ہیں؟“                                                                                                                                                                                        
وزیر نے کہا کہ :”وہ پانچ اسباب یہ ہیں“:                                                                                                                                                                                                                     
”پہلی وجہ یہ کہ میں کھڑا رہتا تھا اور آپ بیٹھے رہتے تھے۔ اب اللہ کی بندگی میں ہوں تو بیٹھنے کی سہولت مل گئی ہے۔“                                        
”دوسری وجہ یہ کہ آپ تو بیٹھے کھاتے رہتے تھے اور میں کھڑا آپ کو دیکھتا رہتا تھا۔ مگر اب ایسا رزق مل گیا ہے مجھ کو کہ اُلٹا وہ مجھے کھلاتا ہے اور خود کھانے پینے سے بے نیاز ہے!“                                                                                                                                                                                                                    
”تیسری وجہ یہ ہے کہ آپ خود تو سوتے رہتے تھے اور میں پہرہ دیتا تھا۔ اب میں ایسے بادشاہ کی غلامی میں ہوںکہ میں خود سوتا رہتا ہوں اور وہ میری نگہبانی کرتا ہے۔“                                                                                                                                                                                                                                    
”چوتھی وجہ یہ ہے کہ میں ڈرتا تھا کہ آپ مر گئے تو آپ کے دُشمن مجھے تکلیف دیں گے۔ مگر اب ایک ایسی ہستی کی خدمت میں ہوں جو ہمیشہ قائم رہے گی۔ اس لئے مجھے کسی کا خوف نہیں!“                                                                                                                                                                                            
”پانچویں وجہ یہ تھی کہ میں سوچتا تھا کہ مجھ سے کوئی غلطی ہو گئی تو آپ مجھے نہیں بخشیں گے۔ اب مالک ایسا رحم دل ہے کہ دن میں سو مرتبہ بھی گُناہ کروں تو وہ توبہ کرنے سے بخش دیتا ہے!!“                                                                                                                                                                                    

                محترم قارئین! بات اتنی نہیں ہے کہ اللہ بادشاہ ہے۔ بات یہ بھی ہے کہ اللہ کے فضل و کرم سے اُس کے سپاہی بھی اپنی ذات سے ایسے بے نیاز ہو جاتے ہیں کہ مخلوق کی مدد کرنے کی خاطر دن رات تیار رہتے ہیں، کھڑے رہتے ہیں! جب کھانا کھلانے پر آتے ہیں تو کھانا کھانے والے کو کھانا پکا کر خود اپنے ہاتھوں سے کھلاتے ہیں اور بلاشُبہ کھانے کے لئے اچھا حصّہ پیش کرتے ہیں۔ خود کو دھوپ میں کھڑا رکھ کر آپ کو چھاﺅں میں سُلا دیتے ہیں۔اُن کے بعد بھی آپ کے لئے اُن کا فیض ایسے ہی جاری رہتا ہے جیسے وہ زندہ و جاوید ہوں!! آپ کتنی ہی غلطی کیوں نہ کر لیں وہ آپ کو مُعاف کر دیتے ہیں۔ اللہ کے سپاہی کسی کو اپنے در سے نہیں نکالتے کہ اچھا بُرا تو اللہ کی ذات کو پتہ ہے تو اُن کا کام تو صرف احلاً و سھلاً مرحبا کہنا ہوتا ہے۔                                                                                                                                              
                یہی وجہ ہے کہ آپ کو اولیاءاللہ کے گرد ہر طرح کی مخلوق کا ہجوم ملے گا ۔ اُن کے جیتے جی بھی اور اُن کی شہادت کے بعد بھی۔اگر آپ حیران ہیں کہ ہم نے اِن کو شہید کیوں کہا تو ایک راز کی بات بتاتے ہیںآج آپ کو ۔ وہ یہ کہ جو اپنے نفس سے لڑتا ہوا وفات پا گیا وہ بہت بڑا شہید ہے اور شہید تو زندہ ہے مگر ہمیں اُس کی زندگی کا علم نہیں۔ خواتین و حضرات آپ کو کہیں کوئی ایسا شخص دِکھے جو خود اُس دُنیاوی بادشاہ کی طرح کسی مخلوق کو اپنے ذاتی آرام کی خاطر کھڑا رکھے، اپنی ذات کے لئے بدلہ لے اور مُعاف نہ کرے تو جان لیجیئے گا کہ وہ اللہ کا سپاہی نہیں ہے کیوں کہ اللہ کے سپاہی تو بڑے بے بس اور بے ضرر سے ہوتے ہیں!                                                                                                
ہاتھ اُٹھاتے نہیں کہ بے بس ہیں
زندگی بے ضرر ہے شہیدوں کی

اللہ آپ کو آسانیاں عطا فرمائے اور آسانیاں تقسیم کرنے کا شرف عطا فرمائے! آمین!                                                                                                                
X————————-X

Image

 

Categories: Uncategorized

عِشق نے درد ڈھونڈ لینا ہے!!

سیاہی آخرِ شب
سید مزمل احمد سیاہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عِشق نے درد ڈھونڈ لینا ہے!!

بات کہیں کی بھی ہو پتہ نہیں کیوں بابوں تک نکل آتی ہے ۔بار بار کوشش کی ہے کہ ایک طرح کا ذکر بار بار نہ کریں، کچھ جدّت لے کر آئیں مگر نہیں جانتے کہ ہمیں بابوں سے محبت رہی ہے یا بابوں نے ہمیں پکر لیا ہے، چاہتے ہوئے بھی ایسا کر نہیں پاتے۔ ایک آواز گونجتی رہتی ہے: ’خوش ہو جا بچہ؛ تیری کونپل پھُوٹے گی!!‘ ۔ ابھی کچھ دنوں قبل ہمیں ایک کالج میں ایک ایسا کرکٹ میچ دیکھنے کا اتفاق ہوا جس میں قیاس آرائی یہ کی جا رہی تھی کہ اِن میں سے ایک ٹیم کو ’بڑوں‘ کی آشرباد حاصل ہے۔ اب اِس میں کس حد تک صداقت تھی یا نہیں یہ ہم نہیں جان سکے مگر ہماری توجہ کا مرکز وہ بچے تھے کہ جو ہارنے کے بعد رو پیٹ رہے تھے کہ ہمیشہ ہمارے ساتھ ہی ایسا کیوں ہوتا ہے، why alway us?? اور یہ کہ ہمیشہ ہم کو جان بوجھ کر ہروایا جاتا ہے۔ توہمیں بڑی خوشی ہوئی کہ چلو پھر سے اللہ کوئی کونپل پھُٹوانے جا رہا ہے۔ ہم نے خوشی سے اُن روتے ہوئے بچوں سے کہا کہ خوش ہو جاﺅ تمہارے ساتھ تو بہت اچھا ہونے والا ہے، مگر یہ سُن کر اُن کا رونا اور بڑھ گیا کہ سب جھوٹ ہے ایسا کچھ نہیں ہونے والا، بھلا ایسا کبھی ہوا ہے کہ زیادتی کی جا رہی ہو اور آخر میں ہم پر کوئی خوشی نازل ہو، ہمیں جو اِتنے دباﺅ میں رکھا جا رہا ہے تو یہ کیونکر ممکن ہو پائے گا کہ ہم ہی کامیاب ہو سکیں گے۔ اُن کو سمجھانے کے لئے تو کئی ایک کو ہمیں قرآن سے اخذ کردہ مفہوم بھی بتانا پڑا کہ سیدھا رستہ نہ چھوڑو چاہے کتنی مشکلات کا سامنا کیوں نہ ہو اور بے شک آپ سرخرو ہونے والے ہیں، مگر اُنہوں نے ایک نہ مانی۔ ہمیں بھی کوئی ملال نہیں، کہ چاہے زندگی میں غلط فہمیاں کتنی ہی رہی ہوں مگر ایک معاملے میں ذرا غلط فہمی نہیں اور وہ یہ کہ ہم صرف کسی حد تک وہ بتانے کی کوشش کر سکتے ہیں جو بابا لوگ کہہ گئے اور جن کو جانچنے کی ہم نے کبھی کوشش نہیں کی، بس تسلیم کر لیا۔ تو ہدایت اللہ کے ہاتھ میں ہے، ہم بس کوشش کر سکتے ہیں اللہ نے سمجھا دیا تو ٹھیک ورنہ کچھ نہیں ہو سکتا۔

زندگی اکثر اوقات آپ پر اتنا دباﺅ ڈال دیتی ہے کہ آپ کو اپنی زندگی اور اپنا آپ برداشت سے باہر لگنے لگتا ہے۔ ایسے میں اگر کوئی ایسی بات سمجھانے والا آ جائے جو کہے کہ ’خوش ہو جا بچہ؛ تیری کونپل پھُوٹے گی!!‘ تو یقینا غصّہ فطری بات ہے۔ مگر اِس جملے میں بڑا رمز پوشیدہ ہے! اللہ کا کوئی کام مصلحت سے خالی نہیں ہے۔ ’کوئی تخلیق بھی خالی نہیں رُلائی کے‘ کے مصدق اگر اپنے اِرد گِرد دیکھیں تو ہمیں معلوم ہو گا کہ کوئی تخلیق بھی بغیر کسی دباﺅ کے وجود میں نہیں آتی۔ آنے والا اچھا وقت کسی بُرے اور کٹھن وقت کو سہنے کا نتیجہ ہو سکتا ہے۔ کوئی انسانی بچہ اندھیر کوٹھری میں مقرر وقت گُزارے بغیر دُنیا میں نہیں آتا، کسی ماں کو کوئی بچہ کسی یوٹیلیٹی سٹور سے نہیں ملتا، کوئی بیج دھرتی کا بوجھ اور گھُٹن سہے بغیر بوٹا بن کر، دھرتی چیر کر نہیں نکلتا۔ گھُٹن سہہ جانا بذاتِ خود ایک بہت بڑی شکتی ہے، بہت بڑی طاقت ہے اور خود میں ایک بہت بڑی تپسیا بھی ہے۔

تو آپ ہرگز ہرگز یہ گمان نہ رکھیں کہ کچھ غلط ہونے والا ہے، عنقریب آپ کی یہ گھُٹن، یہ حَبس بہت خوشگوار بَرکھا میں بدل جانے والے ہیں، بہت اچھا ہونے والا ہے، اُن کے لئے جو گھُٹن سہہ رہے ہیں اور بے شک بہت ہی بُرا ہونے والا ہے اُن کے ساتھ جنہوں نے اللہ کے نام پر حاصل کی جانے والی اور اللہ کو سونپ دی جانے والی زمین کے ساتھ بدنیتی کی ہے! پاکستان ایک جنون، ایک عشق کا نام ہے اور بلاشُبہ پاکستان نُور ہے؛ نُور کو زوال نہیں!!اگر آپ کے ساتھ کچھ ایسا ہو رہا ہے جو آپ کو لگتا ہے کہ زیادتی ہو رہی ہے تو ہمارا پیغام ہے آپ کو کہ آپ اِس زیادتی کے خلاف حسبِ طاقت آواز ضرور بُلند کریں کہ آپ کا بطور انسان حق ہے کہ غلط کو غلط کہیں مگر ایک بات کا خیال رہے کہ درد لینے اور پال لینے میں رغبت رکھیں کہ درد اور گُھٹن سنبھال لینے والے بُوٹا بن کر، دھرتی چیر کر باہر آ جاتے ہیں! اور ایسا بوجھ اُٹھا لینے والوں کا رُتبہ کسی عاشق سے کم نہیں جو نشونُما کے لئے درد خود ڈھونڈ لیتا ہے!!

عِشق نے درد ڈھونڈ لینا تھا
کوئی ہوتا اگر نہ تم ہوتے

بہت خوش رہیں، آباد رہیں! کوئی رات ایسی نہیں آئی کہ جس کے بعد مالک کے حکم سے سویرا نہ ہوا ہو۔ آپ اپنا کام کریں اور اللہ کو اپنا کام کرنے دیں کہ آپ اللہ کا کام نہیں کر سکتے۔ اندھیرے سے اُجالا تو اللہ نکالتا ہے!!

اللہ آپ کو آسانیاں عطا فرمائے اور آسانیاں تقسیم کرنے کا شرف عطا فرمائے! آمین!

X————————-XImage

Categories: Sufism

اُلجھن، سُلجھن!

سیاہی آخرِ شب
سید مزمل احمد سیاہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اُلجھن، سُلجھن!

قوموں کے لئے کربناک وقت وہ نہیں ہوتا کہ جب اُنہیں اِدراک مل جائے کہ اُن کے درمیان کوئی گنہگار ہے بلکہ کربناک وقت وہ ہوتا ہے جب وہ اُلجھن کا شکار ہو جائیں کہ کون نیک ہے ۔ المیہ یہ نہیں ہوا کرتا کہ مجرم جرم کر کے فرار ہو جائے بلکہ المیہ یہ ہوتا ہے کہ مجرم سامنے کھڑا ہو اور پہچانا بھی نہ جا سکتا ہو۔ مصیبت یہ نہیں ہے کہ ہم کو دشمن کے ساتھ کوئی معرکہ درپیش ہے بلکہ اُلجھن تو یہ ہے کہ ہمارے اپنے ہی آنکھیں بدل چکے ہیں۔ جی ہاں! آسان الفاظ میں عرض کریں تو بات مختصر سی ہے کہ آپ اُلجھ گئے ہیں! اور سچ پوچھیں تو اُلجھنا بنتا بھی ہے۔ آج آپ کو یقیناً ایسا لگ رہا ہے کہ آپ پھنس گئے ہیں اور اِس اُلجھن سے باہر نکلنے کا جو رستہ دِکھ رہا ہے وہ رستہ نہیں ہے بلکہ وہ تو اُلٹا جال ہے ، ایک نہ ختم ہونے والا جال جو آپ کے سر پر لٹکا دیا گیا ہے۔ ہماری بات کو سمجھنا بہت آسان ہے مگر صرف اُس وقت جب آپ خود کو ڈھیلا چھوڑیں گے اور جس سمت میں بھاگتے جا رہے ہیں بھاگنا چھوڑ دیں گے۔ کہتے ہیں کہ فلاح دین میں ہی ہے ہم نے بھی کچھ ایسا ہی پڑھا ہے کتابوں میں، اور سُنا ہے بُزرگوں سے کہ ایسا ضرورہے۔ بابا قائدِاعظم نے بھی کچھ ایسا ہی گیان دیا تھا مگر ہمیں لگتا ہے کہ ہم اُس وقت پوری توجہ سے سُن نہیں رہے تھے یا سُنا تھا تو ہم نے اپنے مفاد کی خاطر اُن تمام باتوں اور گیانوں کو پسِ پشت ڈال دیا ہے۔ پاکستان جب حاصل کیا گیا تھا تو بابا جی سے پوچھا گیا کہ بڑا کارنامہ انجام تو دے دیا ہے مگر ایک الگ اور خود مختار ملک کا آئین کیا ہو گا؟ تو فرمایا کہ ’قرآن اور سنّت پر عمل‘۔ تو ٹھیک ہی فرمایا تھا بابا جی نے کہ جو ملک اللہ کے نام پر حاصل کیا گیا ہو یا جس کے مطلب کا نعرہ ’لااِلہ اِلااللہ‘ ہو اِس کو ایسا ہی کچھ زیب دیتا ہے۔ مگر ہمیں لگتا ہے کہ ہم نے اپنے نفس کے جال میں آ کر کوئی اور رہنما تلاش کر لیا اور بابا جی حضرت قائدِاعظم محمد علی جناحؒ اور اُن کے ہمنواﺅں سے جان چُھڑا کر کسی اور کو اپنا ہمدرد مان لیا۔ المیہ اِتنا ہی نہیں ہوا ہے بلکہ ہمارے درمیان کچھ ایسے لوگ بھی آ گئے جنہوں نے ہمیں یقین دلا دیا کہ اب قرآن و سُنّت پر عمل نعوذوباللہ دقیانوسی باتیں ہیں اور یہ کہ اللہ نے اُس زمانے میں ایسا فلاں وجوہات کی بِنا پر کہا تھا اور ایسا حکم تو اب قابلِ عمل نہیں ہے۔ ہم نے قرآن و سُنّت کو آئین نہیں بنایا اور سُود کو بھی اپنے مُعاشی نطام میں شامل کر لیا۔یاد رکھیں کہ اللہ کے احکامات میں کسی اگر مگر کی گُنجائش نہیں ہے اگر کچھ منع کر دیا تو کر دیا، حکم کو تسلیم کیا جاتا ہے اور اُس کی تعمیل کی جاتی ہے، توجیہ تلاش نہیں کی جاتی کہ ایسا کیوں ہے۔ اگر اللہ نے کہہ دیا کہ سُود نہ کھاﺅ تو رُک جائیں اور اِس کا سوچیں بھی نہیں ۔ اگر اللہ نے کہا ہے کہ نگاہیں نیچی رکھو تو رکھیں نیچی، سطر ڈھانپنے کا بولا ہے تو ڈھانپیں بس اور مت پوچھیں کہ کیوں، برباد ہو جائیں گے!

جب جب آپ اللہ سے دور ہو جاتے ہیں تو آپ بھٹک جاتے ہیں اور امان تو اللہ کے ہی پاس ہے، اُس سے دور جا کر کچھ ہاتھ نہیں آنا۔ ابھی بھی کچھ نہیں بگڑا، آئیں ہم آپ کو سُلجھن کی طرف لانا چاہتے ہیں۔ بس آپ اپنی کرنی چھوڑ دیں کہ بہت آزما لیا آپ نے اپنے زورِ بازو کو، حوالے کر دیں خود کو اُس کے جو اللہ چاہتا ہے۔ کہیں آپ یہ تو نہیں سمجھے کہ ہم آپ کو نماز پڑھنے، داڑھی رکھنے یا پردہ کرنے کو کہہ رہے ہیں۔ ایسا بالکل نہیں ہے کہ یہ تو بڑے اعلی و ارفع کام ہیں۔ ہم تو بس اتنا عرض کر رہے ہیں کہ آپ اللہ کو مانتے رہے ہوں گے مگر آج سے اللہ کی ماننا شروع کر دیں،بات بن جائے گی، کام ہو جائے گا! جن باتوں سے روک دیا گیا ہے، رُک جائیں اور جن کے کرنے کا حکم دے دیا ہے، کر گزریں، اور نہ ڈریں کہ اچھے غلام ڈرتے نہیں ہیں کہ اُن کو پتہ ہے کہ مالک جاگ رہا ہے اُن کو ہر شر سے بچانے کے لئے۔ یہی ہے سُلجھن سبھی اُلجھنوں کی اور یہی حل ہے!

ابھی ہماری نظروں کے آگے گزرے وقتوں کا وہ کارڈ آ گیا ہے جس کو بے دلی سے کبھی اِک بار پڑھا تھا مگر دل پہ ثبت ایسا ہو گیا کہ وقت کے ساتھ ساتھ اِس کے نقوش گہرے ہی ہوتے چلے جا رہے ہیں۔ لکھا تھا:

”اے ابنِ آدم! ایک میری چاہت ہے اور ایک تیری چاہت۔ ہو گا تو وہی جو میری چاہت ہے۔ پس اگر تو نے حوالے کر دیا خود کو اُس کے جو میری چاہت ہے، تو میں لوٹا دوں گا تُجھ کو وہ جو تیری چاہت ہے۔ اور اگر تو نے ایسا نہ کیا جو میری چاہت ہے تو میں تھکا دوں گا تجھ کو پیچھے اُس کے جو تیری چاہت ہے۔ پھر ہو گا وہی جو میری چاہت ہے!!“

اللہ آپ کو آسانیاں عطا فرمائے اور آسانیاں تقسیم کرنے کا شرف عطا فرمائے! آمین!

اُلجھن، سُلجھن!

Categories: Sufism